• Ansha Turk & Sehrish Turk

خانہ بدوش


اندرونِ سندھ(کینجھر جھیل) سے آئے ہوئے چند خاندان جن میں زیادہ تعداد بچوں کی ہے،کراچی کے علاقے لیاری میں خانہ بدوشوں کی زندگی بسر کر رہے ہیں۔ یہ خاندان کراچی شہر میں روزگار کی تلاش میں آئے ہیں لیکن بےروزگاری یہاں بھی ان کا مقدر بنی ہوئی ہے ۔ پریشانی کی صورتحال میں یہ کھلے آسمان تلے زندگی گزار رہے ہیں اور روزگار نہ ہونے کے سبب بھیک مانگنے پر مجبور ہیں ۔ اس صورتحال میں دیگر مسائل کے ساتھ انکے بچوں کو تعلیم اور صحت کے مسائل کا بھی سامناہے۔ فٹ پاتھ پر سرد راتوں میں ان کو بہت پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

خانہ بدوشوں کے خاندانوں سے تعلق رکھنے والے نور محمد کا کہنا تھا کہ ’’ کینجھر میں انکے جھونپڑے نما سائبان ہیں اور ہر چار ماہ بعد یہ اپنے گاؤں کا رخ کرتے ہیں اور پھر وہاں سے بھی مایوسی کی صورت میں واپس کراچی کی طرف لوٹ آتے ہیں۔‘‘

نور محمد نے اپنی روز مرہ زندگی کے بارے ميں بتاتے ہوئے کہا کہ معمول کے مطابق یہ لوگ اپنی صبح کی شروعات ایک مخصوص ہوٹل کی جانب رخ کرکے کرتے ہیں جہاں آنے والے گاہک میں سے کوئی ان کو ناشتہ خیرات کردیتا ہے اور یہ ان کا روز کا معمول ہے۔

نور محمد نے آخر میں کہا کہ اگر ہمارے روزگار کا انتظام ہوجائے تو ہم اس طرح بھیک مانگ کر زندگی بسر نہ کریں۔

Contributor:

Ansha Turk, Sehrish Turk, Zainab Dawood and Zulekha Dawood are participants from Agra Taj Colony, Lyari.


6 views

A Project by SIE in collaboration with KYI.

  • Facebook - White Circle
  • Twitter - White Circle
  • Instagram - White Circle