• Adil Ansari

محنت کش محمد ریاض کی کہانی


پاکستان چوک کا نام کوئی میرے دل کی لوح پر سے کُھرچ کر مٹا نہیں سکتا ۔

کراچی کے سب سے بڑے اور مشہور چوکوں میں سے ایک پاکستان چوک ہے جس کی تاریخ پر اگر نظر ڈالی جائے تو یہ چوک اس وجہ سے مشہور ہےکہ یہاں پر کراچی کے آٹھ راستے ایک ساتھ ملتے ہیں اور یہاں پر کراچی کی بہت سی قدیمی عمارات موجود ہیں جن کا شمار دنيا کی بڑی عمارتوں میں ہوتا ہے اس لئے یہ علاقہ کراچی کا سب سے بڑا اور مشہور 'پاکستان چوک' کہلاتا ہے۔

یہاں پر موجود محمد ریاض جوکہ ایبٹ آباد میں رہتے تھے گھر اور روزگار نہ ملنے کی وجہ سے 1987 میں کراچی آئےاور دن رات محنت مذدوری کرکے انہوں نے کچھ پیسے جمع کرکے یہ گھوڑا اور گاڑی خریدی۔ محمد ریاض کا کہنا ہے کہ مجھے کسی کا سہاراحاصل نہیں ہے۔ میرا کوئی بیٹا نہیں صرف ایک 10سال کی بیٹی ہےجوکہ چھٹی جماعت میں تعليم حاصل کررہی ہےاور میں دن رات صرف اپنی بیٹی کے لئے محنت کرتا ہوں۔ صبح سات بجے سے لیکر رات دس بجے تک 500 سے 600 تک کما لیتا ہوں۔ اور یہ گھوڑا گاڑی چلاتے ہوئے مجھے کراچی میں تیس سال ہو چکے ہیں۔ دن رات خدا کا شکر ادا کرتا ہوں جس نے مجھ روزگار اور عزت دی اپنی محنت کی روزی روٹی کما کر کھاتا ہوں اورکسی کے سامنے آج تک ہاتھ نہیں پھیلایا۔

محمد ریاض کا کہناتھا کہ میرا خواب ہےکہ میں اپنی بیٹی کو زیادہ سے زیادہ علم حاصل کرواؤں اور میری خواہش ہے کہ میں اپنی بیٹی کو ڈاکٹر بناؤں تاکہ یہ میرا اور اپنے ملک پاکستان کا نام روشن کرے۔

Contributor:

Adil Ansari is a participant from Ibrahim Hyderi. He is interested in photography and video making. He is also an active participant at a youth organization in his area.

#high

1 view

A Project by SIE in collaboration with KYI.

  • Facebook - White Circle
  • Twitter - White Circle
  • Instagram - White Circle